اہم سوال و جواب


تمام افراد طے شدہ پروگرام کے تحت صبح کے وقت مریض سے ملتے ہیں جب وہ زیادہ نشے میں ہو اور نہ تروڑک میں۔ سربراہ مریض کو سب کی آمد کا مقصد بیان کرتا ہے اور اس سے وعدہ لیتا ہے کہ وہ خاموشی سے تمام افرا د کے نکات سن لے۔ تاہم مریض کو جواب دینے سے بری الذمہ کر دیا جاتا ہے۔ مریض کا کردار ایک سامع کے طور پر متعین کر دیا جاتا ہے کیونکہ انٹروینشن میں مریض کے ساتھ تبادلہ خیال کا موقع نہیں ہوتا۔

* علاج کے بعد بھی مریض کو کنٹرول کرنے کو جی کیوں چاہتا ہے؟
مریض کو کنٹرول کرنے کی عادت آپ کو تب پڑی تھی جب وہ اندھا دھند نشہ کر رہا تھا۔ علاج کے بعد بھی اسے کنٹرول کرنے کو اس لئے جی چاہتا ہے کہ یہ ’’عادت‘‘ ہے اور عادت لوٹ کر آتی ہے۔ اب آپ کنٹرول کرنے کی کوشش کرتے ہیں تو مریض بے چین ہوتا ہے اور آپ کنٹرول چھوڑتے ہیں تو آپ بے چین ہوتے ہیں۔ آپ بے چین نہیں ہونا چاہتے اس لیے آپ کنٹرول نہیں چھوڑتے۔
تین وجوہات کی بنا پر اس بات کی بہت اہمیت ہے کہ مریض کو کنٹرول نہ کیا جائے۔ پہلی وجہ یہ ہے کہ کنٹرول آپ کے باہمی تعلقات کیلئے زہر ہے۔ دوسری یہ بہت ’’کٹھن مزدوری‘‘ ہے۔ تیسری یہ ہے کہ ایسا کرنا ممکن ہی نہیں۔ اگر آپ بے چینی اور مایوسی کے طلب گار نہیں ہیں تو ہمارا مشورہ آپ کو یہی ہے کہ بے جا کنٹرول سے باز رہیں۔ اب آپ پر یہ جذبہ غالب آنے لگے تو معالج سے رابطہ کریں۔

* اگر ہمیں مریض پر شک ہو تو کیا کریں؟
آپ کا مریض نشے کے علاج میں سے گزرا ہے اور آپ کو اس پر شک ہو رہا ہے۔ بارہا آپ کو نشے کی علامتوں کا وہم ہوتا ہے۔ بعض اوقات آپ کو لگتا ہے کہ اس کا رویہ مضحکہ خیز ہے۔ اس کے موڈ کا اتار چڑھاؤ عجیب لگتا ہے۔ آپ کو خوف ہوتا ہے کہ وہ کہیں چوری چوری نشہ تو نہیں کر رہا؟ آپ چاہتے ہیں کہ مریض آپ کی تسلی کرائے۔ آپ چاہتے ہیں کہ آپ کے سکون کا بندوبست مریض کرے۔ جس کے پاس خود سکون کی کمی ہے۔ آپ کی بے اعتمادی پر اسے غصہ آئے گا۔ ہو سکتا ہے کہ وہ اسے نشہ کرنے کیلئے اب بہترین جواز بنا لے۔ یہ کتنے ستم کی بات ہو گی۔ ہم آپ کیلئے متبادل راستہ پیش کرتے ہیں۔ پہلے تو معالج سے رابطہ کریں۔ اپنے خدشات بیان کریں اور اس سے صلاح لیں۔ فی الحال آپ یہ نہ دیکھیں کہ وہ نشہ کر رہا ہے کہ نہیں؟ آپ یہ دیکھیں کہ وہ کیا کر رہا ہے؟ میٹنگ میں شمولیت، راہنما اور معالج سے اس کا رابطہ کیسا ہے؟ نظم و ضبط کے حوالے سے اس کی کارکردگی پرکھیں۔ جب کوئی مریض دوبارہ نشہ شروع کر دیتا ہے تو یہ بات چھپی نہیں رہ سکتی۔


 

Contact Us

Got a question ? Write it down, right here; and we will reply within 24 hours.


Dear Dr. Sadaqat Ali,