Courtesy: اردو پوانٹ

عجمان ڈیپارٹمنٹ آف اکنامک ڈویلپمنٹ نے حیرت انگیز ڈسکاؤنٹس کی جعلی تشہیر کرنے والی پانچ دُکانوں کو سربمہر کر دیا ہے جبکہ 52 کے قریب سٹورز اور سُپر مارکیٹس کو جرمانے عائد کیے گئے ہیں۔ ڈیپارٹمنٹ کے ترجمان کے مطابق یہ کارروائیاں گزشتہ چھہ ماہ کے دوران تجارتی دھوکا دہی کے انسداد کے لیے شروع کی گئی مہم کے تحت کی گئیں۔

نشے سے نجات کیلئےایک دُکھی دل کی پکار “یہ دھواں کھا گیا ، میری روح کو، میرے چین کو ” گلوکار سلطان بلوچ کا سلگتا ہوا نغمہ ، دلگداز آواز، دل کو چھو لینے والی دھن روح کو تڑپا دینے والے بول – ولنگ ویز پروڈکشن

اس مہم کے دوران 62 سٹورز کو تحریری وارننگ دی گئیں کہ وہ خود کو راہِ راست پر لے آئیں ورنہ مستقبل میں اُن کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔ عجمان میں بہت سے سٹورز ایسے تھے جو 80 فیصد تک ڈسکاؤنٹس کی تشہیر کر کے عوام کو بے وقوف بنانے میں لگے ہوئے تھے۔ درحقیقت ان اشیاء کی اصل قیمت انتہائی کم تھی مگر یہ اسے مہنگی ظاہر کر کے اُس پر 50فیصد، 60 فیصد اور 80 فیصد
تک رعایت دے کر عوام کو لُوٹنے میں مصروف تھے۔

اس کریک ڈاؤن کے دوران ڈیپارٹمنٹ کی جانب سے ایسے سٹورز پر بھی جرمانے عائد کیے گئے ہیں جو اشیاء کو حکومت کی جانب سے مخصوص کردہ نرخوں سے زائد پر فروخت کر رہے تھے۔ حالانکہ حکومت کی جانب سے تقریباً 480 سٹورز پر قریب قریب 3500 اشیاء کی قیمتیں مخصوص کر دی گئی ہیں۔ زائد قیمت پر اشیاء بیچنے پر ایک سٹور کو سِیل کر دیا گیا، 46 کو جرمانے عائد کیے گئے اور 83 کو تنبیہ کی گئی ہے۔

ڈیپارٹمنٹ کی جانب سے عوام کو تاکید کی جاتی ہے کہ وہ صارفین کو بھاری ڈسکاؤنٹس کا دھوکا دے کر لُوٹنے والے دُکاندارں کی شکایت کریں۔ جب بھی کسی صارف کی جانب سے گراں فروشی یا جعلی ڈسکاؤنٹ کے حوالے سے کوئی شکایت موصول ہوتی ہے تو انسپکٹرز فوری طور پر متعلقہ سٹورز جا کر چھان بین کرتے ہیں اور اگر کسی خلاف ورزی کا پتا چلے تو موقع پر ہی جرمانہ عائد کر دیا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ انسپکٹرز حضرات مختلف کاروباری مقامات پر اچانک چھاپے بھی مارتے ہیں۔ کسی بھی سٹور یا سُپر مارکیٹ کی انتظامیہ ڈیپارٹمنٹ کی پیشگی منظوری اور لائسنس کے بغیر ڈسکاؤنٹ آفر کا کوئی پوسٹ، اشتہار یا بینر اپنے کاروباری مرکز کے اندر یا باہر نصب نہیں کر سکتی۔