ہم نشے میں کیسے مدد کرتے ہیں؟

انٹروینشن

یادرکھیے! مندرجہ ذیل روئیے معاونت کے زمرے میں آتے ہیں۔

مریض کی جگہ اس کی ذمہ داریاں نبھانا، لوگوں کے سامنے بہانے کرنا، اس کی بیماری کو راز بنانا اور ایسے موقعوں پر مریض سے دور رہنا جب نشے کے استعمال کی وجہ سے اسے شرمندگی کا سامنا ہو۔

مریض کو نشے کر لیے رقمیں فراہم کرنا، اس کے کیے ہوئے نقصانات بھرنا، اس کے قرض چکانا، غیرقانونی حرکات کرتے ہوئے جب مریض پکڑا جائے تو اسے فوری طور پر رہائی دلانا۔

مریض کی حفاظت

مریض کے نشہ کرنے کے جواز تسلیم کرنا اور اس کے نشے کا الزام دوسرے لوگوں یا حالات پر دینا۔ جب مریض نشے میں دھت ہو تو اس کی حفاظت کی خاطر چوکیداری کرنا۔ دیکھنے میں یہ آیا ہے کہ جب معاونت سے حالات اور بگڑ جاتے ہیں تو اکثر اہل خانہ اشتعال میں آ کر سختیاں کرنے لگتے ہیں۔ جس کے نتائج ایک مرتبہ پھر معاونت کی صورت میں ہی نکلتے ہیں۔ یعنی مریض نشہ چھوڑنے کی بجائے ناصرف زیادہ نشہ کرنا شروع کردیتا ہے بلکہ اپنے آپ کو حق بجانب بھی تصور کرنے لگتا ہے۔ یوں سمجھ لیں کہ نرمی ہو یا سختی، دونوں روئیے مریض کو نشہ کرنے سے روکتے نہیں بلکہ اسے مزید نشہ کرنے کی راہ ہموار کر کے دیتے ہیں۔ اس کے لیے صرف اصلاحی رویے ہی کام آتے ہیں۔

ہم سے کیسے رابطہ کریں۔

رابطہ کریں